Main Menu

ماؤں کا عالمی دن ۔ سلیمان ہاشم

مات تو منا مدام یات کائے “
ماتے مٹ و بدل نیست اللہ ہر
کسی ماتاں سلامت بکنت
ماتانی روچ۔۔۔۔
دنیا بھر میں آج ماں سے اپنی محبت کے اظہار کا دن منایا جارہا ہے، جس کا مقصد ماؤں کی عظمت کا اعتراف اورانہیں خراج تحسین پیش کرنا ہے۔

مات منی گل زمین انت
اس دن کو منانے کا مقصد معاشرے میں ماﺅں سے محبت اوران کے احترام کو فروغ دینا ہے

یاد رہے کہ ماﺅں کے عالمی دن منانے کی تاریخ بہت قدیم ہے اور اس کا سب سے پہلے یونانی تہذیب میں سراغ ملتا ہے جہاں تمام دیوتاوں کی ماں ”گرہیا دیوی“ کے اعزاز میں یہ دن منایا جاتا تھا۔

ماؤں کا دن ہر سال یہ دن مختلف ممالک میں منایا جاتا ہے، عالمی طور پر اس کی کوئی ایک متفقہ تاریخ نہیں، یہ دن مختلف ممالک میں مختلف تاریخوں کے حوالے سے منایا جاتا ہے۔ یہ دن مئی کے دوسرے اتوار کو منایا جاتا ہے اور کئی ایسے ممالک بھی ہیں جو یہ دن جنوری ،مارچ ،نومبر یا اکتوبر میں بهی مناتے ہیں۔

سولہویں صدی میں ایسٹر سے 40 روز پہلے انگلستان میں ایک دن ”مدرنگ سنڈے“ کے نام سے موسوم تھا۔ امریکہ میں مدرز ڈے کا آغاز 1872ء میں ہوا۔

سن 1907ء میں فلاڈیفیا کی اینا جاروس نے اسے قومی دن کے طور پر منانے کی تحریک چلائی جو بالآخر کامیاب ہوئی اور 1911ء میں امریکہ کی ایک ریاست میں یہ دن منایا گیا۔

ان کوششوں کے نتیجے میں 8 مئی 1914ء کو امریکہ کے صدر ووڈرو ولسن نے مئی کے دوسرے اتوار کو سرکاری طورپر ماؤں کا دن قراردیا، اب دنیا بھر میں ہرسال مئی کے دوسرے اتوار کو یہ دن منایا جاتا ماﺅں کی عظمت کے لیے اہم قرار دیتے ہیں، ماﺅں سے محبت کے لیے ایک دن مختص کرنے کا کوئی جواز نہیں جبکہ ماں جیسی عظیم ہستی ہمیشہ محبت وتکریم کے لائق ہے۔

ماﺅں کے عالمی دن کے موقع پر ہمیشه یادرکھنا چاہیے کہ والدین ایک سائے کی طرح ہیں جن کی ٹھنڈک کا احساس ہمیں اس وقت تک نہیں ہوتا جب تک یہ سایہ سر پر موجود رہتے ہیں. جونہی یہ سایہ اُٹھ جاتی ہیں تب پتہ چلتاہے کہ ہم کجھ کھو چکے ہیں۔
آ چکانی سروک پت و مات و برات اے دنیا ءَ رو انت و آ چورو بنت. آ چونیں هزابیں زند گوازینت الله کسی مات و پتاں و گهاراں و براتاں مدام سلامت بکنت آ مادر پادر پہ وتی چکاں سر سبزیں درچکانی ساهگ بباتاں…آمین۔۔۔۔

اے تاک ءَ سوشل میڈیا ءَ شنگ کنئے


« ( (Previous Post) پشتءِ نبشتانک )
((Next Post) دیمءِ نبشتانک ) »



Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *